What's new

Govt releases over 100 TTP prisoners as ‘goodwill gesture’

muhammadhafeezmalik

FULL MEMBER
Jan 21, 2015
1,575
-6
1,393
Country
Pakistan
Location
Pakistan
Most of freed Taliban inmates have not completed six-month de-radicalisation and rehabilitation process

1637657055102.png

The government has released more than 100 Taliban prisoners as a “goodwill gesture” to reciprocate the ceasefire announced by the group earlier this month, The Express Tribune can report on the authority of security officials.

Most of the freed Taliban prisoners were undergoing de-radicalisation and rehabilitation at the internment centres set up by the government, the officials said on the condition of anonymity since they were not authorised to speak on record.

“Most of the released inmates have not completed a six-month mandatory de-radicalisation and rehabilitation programme,” one official said. “The rest were ordinary foot soldiers.”
The officials also clarified that the prisoners were not released in compliance with any demand from the Tehreek-e-Taliban Pakistan (TTP), which is currently engaged in negotiations with the government. “The Taliban prisoners were released as a goodwill gesture,” the official added.

On November 8, the TTP announced in a statement that it had reached an agreement with the government to cease hostilities for one month. “The ceasefire agreement between the Pakistan government and the TTP will remain in effect for one month. It could be extended should the two sides agree,” the group said in a statement. “It would equally apply to both sides.”

Federal Information Minister Chaudhry Fawad Hussain also confirmed talks with the TTP which, he said, were being held within the ambit of the Constitution and law of the land. He also confirmed that both sides have agreed to a ceasefire during the talks, facilitated by the interim Afghan government.

The truce was the result of a series of meetings held between the two sides in Afghanistan. Both sides held at least three rounds of talks — one in Kabul and two in Khost – during which they formed committees to take the process forward and try to convert the ceasefire into a permanent peace deal.
The security officials who spoke to The Express Tribune on Monday said that there have been no direct talks thus far between the two sides and that they are engaged through intermediaries.

The Afghan foreign minister also confirmed during a recent visit to Pakistan that they were mediating between the TTP and the Pakistan government. “No individual, but the Islamic Emirate of Afghanistan is mediating between the government of Pakistan and the TTP,” Amir Khan Muttaqi said.

The Express Tribune reported last week that the TTP made three demands during the exploratory talks which include allowing opening of a political office in a third country, reversal of erstwhile FATA’s merger with Khyber-Pakhtunkhwa and enforcement of Islamic shariah in Pakistan.

The official side, however, told the group that these demands were not acceptable. The group was particularly told in categorical terms that enforcement of their version of Islamic law was out of question. Pakistan is an Islamic republic and its Constitution clearly states that all laws in the country have to be in conformity with the teachings of Islam.
The officials also told the TTP that the state of Pakistan could only allow them to restart their lives if they fulfill certain conditions which include accepting the writ of the state, laying down arms, and publicly apologising over the attacks committed by them.

Government should also distribute money among them to go home.
 
Last edited by a moderator:

STREANH

FULL MEMBER
Aug 12, 2021
182
0
284
Country
India
Location
Kuwait
I can understand a ceasefire but there shouldn't be any goodwill gestures towards terrorists especially the ones that have massacred innocent children.
 

PakAlp

FULL MEMBER
Sep 27, 2007
1,373
1
2,210
Country
Pakistan
Location
United Kingdom
These people are responsible for the actual terrorism in Pakistan, they have been called RAW agents for decades and now are released. Double standards. If it was some poor people protesting then the government would have acted like thugs.
 

pakpride00090

SENIOR MEMBER
Feb 28, 2019
2,423
-2
4,650
Country
Pakistan
Location
Pakistan
Taliban khan looking after his terrorist pashtun brothers...

Can't expect anything better from the Pashtun chauvinistic pig we have as a PM
 

khail007

SENIOR MEMBER
Mar 25, 2008
3,691
1
4,091
Country
Pakistan
Location
United Arab Emirates
Most of freed Taliban inmates have not completed six-month de-radicalisation and rehabilitation process

View attachment 796155
The government has released more than 100 Taliban prisoners as a “goodwill gesture” to reciprocate the ceasefire announced by the group earlier this month, The Express Tribune can report on the authority of security officials.

Most of the freed Taliban prisoners were undergoing de-radicalisation and rehabilitation at the internment centres set up by the government, the officials said on the condition of anonymity since they were not authorised to speak on record.

“Most of the released inmates have not completed a six-month mandatory de-radicalisation and rehabilitation programme,” one official said. “The rest were ordinary foot soldiers.”
The officials also clarified that the prisoners were not released in compliance with any demand from the Tehreek-e-Taliban Pakistan (TTP), which is currently engaged in negotiations with the government. “The Taliban prisoners were released as a goodwill gesture,” the official added.

On November 8, the TTP announced in a statement that it had reached an agreement with the government to cease hostilities for one month. “The ceasefire agreement between the Pakistan government and the TTP will remain in effect for one month. It could be extended should the two sides agree,” the group said in a statement. “It would equally apply to both sides.”

Federal Information Minister Chaudhry Fawad Hussain also confirmed talks with the TTP which, he said, were being held within the ambit of the Constitution and law of the land. He also confirmed that both sides have agreed to a ceasefire during the talks, facilitated by the interim Afghan government.

The truce was the result of a series of meetings held between the two sides in Afghanistan. Both sides held at least three rounds of talks — one in Kabul and two in Khost – during which they formed committees to take the process forward and try to convert the ceasefire into a permanent peace deal.
The security officials who spoke to The Express Tribune on Monday said that there have been no direct talks thus far between the two sides and that they are engaged through intermediaries.

The Afghan foreign minister also confirmed during a recent visit to Pakistan that they were mediating between the TTP and the Pakistan government. “No individual, but the Islamic Emirate of Afghanistan is mediating between the government of Pakistan and the TTP,” Amir Khan Muttaqi said.

The Express Tribune reported last week that the TTP made three demands during the exploratory talks which include allowing opening of a political office in a third country, reversal of erstwhile FATA’s merger with Khyber-Pakhtunkhwa and enforcement of Islamic shariah in Pakistan.

The official side, however, told the group that these demands were not acceptable. The group was particularly told in categorical terms that enforcement of their version of Islamic law was out of question. Pakistan is an Islamic republic and its Constitution clearly states that all laws in the country have to be in conformity with the teachings of Islam.
The officials also told the TTP that the state of Pakistan could only allow them to restart their lives if they fulfill certain conditions which include accepting the writ of the state, laying down arms, and publicly apologising over the attacks committed by them.

Government should also distribute money among them to go home.

View attachment 796159
The last above picture is from a previous TLP dharna in Islamabad, This news article seems to be a part of the disinformation campaign from 'Nani Group of Patwaris' and does not contain the whole truth. Further, watch the poster.


تحریک طالبان پاکستان کی قیدیوں کی رہائی کی اطلاعات کی تردید
  • عزیز اللہ خان
  • بی بی سی اردو ڈاٹ کام، پشاور
43 منٹ بعد
طالب

،تصویر کا ذریعہEPA
کالعدم شدت پسند تنظیم تحریکِ طالبان پاکستان کے ترجمان نے ان خبروں کی تردید کی ہے کہ حکومتِ پاکستان نے تنظیم سے تعلق رکھنے والے 100 قیدیوں کو رہا کیا ہے۔
ٹی ٹی پی کے ترجمان محمد خراسانی کا کہنا ہے کہ تاحال حکومت سے بات چیت کا باقاعدہ سلسلہ بھی شروع نہیں ہوا ہے۔
پاکستانی ذرائع ابلاغ میں ایسی خبریں سامنے آئی ہیں، جن میں کہا گیا ہے کہ حکومتِ پاکستان نے خیر سگالی کے جذبے کے تحت حراستی مراکز سے لگ بھگ ایک سو طالبان قیدیوں کو رہا کر دیا ہے۔
خبر میں سکیورٹی ذرائع کے حوالے سے بتایا گیا کہ رہائی کا یہ عمل طالبان کی جانب سے کسی مطالبے کے تحت نہیں کیا گیا بلکہ بات چیت کے لیے سازگار ماحول بنانے کے لیے کیا گیا ہے۔
سینیئر صحافی جمشید باغوان نے بی بی سی کو بتایا کہ اُن کی معلومات کے مطابق ان قیدیوں کو حراستی مراکز سے رہا کیا گیا ہے، جن کی باضابطہ رہائی میں چند ماہ ہی باقی تھے اور ان میں بیشتر تو اپنے گھروں کو بھی پہنچ چکے ہیں۔
اُنھوں نے دعویٰ کیا کہ اُن کے ذرائع کے مطابق قیدیوں کی یہ رہائی طالبان کے مطالبات یا ان کی شرائط کے تحت نہیں کی گئی بلکہ یہ رہائی خیر سگالی کے اقدام کے طور پر کی گئی ہے۔
دوسری جانب تحریک طالبان پاکستان کے ترجمان نے بی بی سی کو بتایا کہ ان کی تنظیم سے تعلق رکھنے والا کوئی قیدی رہا نہیں کیا گیا ہے۔
محمد خراسانی کا کہنا تھا کہ دونوں جانب سے مذاکراتی کمیٹیاں اب تک آمنے سامنے میز پر بیٹھی ہی نہیں تو پھر ایسے میں شرائط اور مطالبات کی بات قبل از وقت ہو گی۔ انھوں نے کہا ہے کہ تحریک طالبان پاکستان کی جانب سے اب تک کسی قسم کی شرائط پیش نہیں کی گئی ہیں۔
پاکستان

،تصویر کا ذریعہGETTY IMAGES
یاد رہے کہ چند روز قبل تحریک طالبان کے طاقتور کمانڈر عبدالولی مہمند عرف عمر خالد خراسانی نے بی بی سی کو بتایا تھا کہ حکومتِ پاکستان کی جانب سے تحریک طالبان پاکستان کے مطالبات ماننے کی صورت ہی میں ان مذاکرات میں پیش رفت ہو سکتی ہے، جس میں اب بھی سرفہرست مطالبہ تحریک طالبان پاکستان کے قید ساتھیوں کی رہائی ہے۔
جمشید باغوان نے بتایا کہ ان کی اطلاع بھی یہی ہے کہ اب تک باضابطہ مذاکرات شروع نہیں ہوئے اور نہ ہی اب تک طالبان کی جانب سے کسی قسم کی کوئی شرائط یا مطالبات سامنے آئے ہیں۔
وزیرستان سے تعلق رکھنے والے ایک قبائلی رہنما نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ دونوں جانب سے مذاکرات کے لیے رابطے ضرور ہوئے ہیں اور بعض رابطے براہ راست ہوئے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ان رابطوں میں کبھی کمیٹیاں شامل رہی ہیں اور کبھی انفرادی طور پر پیغامات کا سلسلہ رہا ہے۔
ان کا کہنا تھا کہ اس وقت تک رابطے اچھے ماحول میں ہو رہے ہیں اور امن معاہدے کو پایہ تکمیل تک پہنچانے کے لیے کوششیں جاری ہیں۔
طالبان

،تصویر کا ذریعہREUTERS
حکومت پاکستان اور تحریک طالبان پاکستان کے درمیان ایک ماہ کے لیے فائر بندی کا اعلان آٹھ نومبر کو ہوا تھا۔ ان مذاکرات کے لیے ثالثی کا کردار افغان حکومت کے اہم طالبان رہنما ادا کر رہے ہیں۔ ٹی ٹی پی نے اس فائر بندی سے متعلق باقاعدہ اعلامیہ جاری کیا تھا۔
یہ بھی پڑھیے
افغان طالبان کو ممکنہ مشکلات سے بچانے کے لیے مذاکرات پر آمادہ ہوئے: عمر خالد خراسانی
عمران خان: پاکستانی طالبان سے بات ہو رہی ہے، نہیں جانتے کہ نتیجہ خیز ہوگی یا نہیں
سراج الدین حقانی کی ’ثالثی‘ میں پاکستان اور ٹی ٹی پی میں مذاکرات: رپورٹ
اعلامیے میں کیا کہا گیا تھا؟
اس اعلامیے میں کہا گیا کہ ’تحریک طالبان پاکستان چونکہ پاکستانی قوم سے ہی بنی ایک اسلامی جہادی تحریک ہے، اس لیے وہ ہمیشہ دیگر اہم مسائل کے ساتھ ساتھ قومی مفاد کو بھی مدنظر رکھتی ہےـ یہ حقیقت ہے کہ مذاکرات جنگ کا حصہ ہیں اور دنیا کی کوئی طاقت اس کا انکار نہیں کر سکتی، لہٰذا تحریک طالبان پاکستان ایسے مذاکرات کے لیے تیار ہے، جس سے ملک بھر میں دیرپا امن قائم ہو سکے اور ہمارے پاکستانیوں کو ایک طرف امن کی بہاریں میسر ہوں اور دوسری طرف پاکستان کے حصول کا مقصد بھی حاصل ہو سکے۔‘
اس اعلامیے میں کہا گیا کہ فریقین نے مذاکراتی کمیٹیوں کے قیام پر اتفاق کیا ہےـ یہ کمیٹیاں آئندہ لائحہ عمل اور فریقین کے مطالبات پر مذاکراتی عمل کو آگے بڑھانے کی کوشش کریں گے۔ فریقین کی طرف سے ایک ماہ یعنی نو نومبر سے نو دسمبر تک فائر بندی ہو گی, جس میں فریقین کی رضامندی سے مزید توسیع بھی کی جائے گی۔
فریقین پر فائربندی کا لحاظ رکھنا ضروری ہے ـ امارت اسلامیہ افغانستان موجودہ مذاکراتی عمل میں تحریک طالبان پاکستان اور حکومت پاکستان کے مابین ثالث کا کردار ادا کر رہی ہے۔

 

muhammadhafeezmalik

FULL MEMBER
Jan 21, 2015
1,575
-6
1,393
Country
Pakistan
Location
Pakistan
Those that were behind killing children are already dead and in the ground

Pakistan needs to move on and look after its interests
Ehsan Ullah Ehsan??
The last above picture is from a previous TLP dharna in Islamabad, This news article seems to be a part of the disinformation campaign from 'Nani Group of Patwaris' and does not contain the whole truth. Further, watch the poster.


تحریک طالبان پاکستان کی قیدیوں کی رہائی کی اطلاعات کی تردید
  • عزیز اللہ خان
  • بی بی سی اردو ڈاٹ کام، پشاور
43 منٹ بعد
طالب

،تصویر کا ذریعہEPA
کالعدم شدت پسند تنظیم تحریکِ طالبان پاکستان کے ترجمان نے ان خبروں کی تردید کی ہے کہ حکومتِ پاکستان نے تنظیم سے تعلق رکھنے والے 100 قیدیوں کو رہا کیا ہے۔
ٹی ٹی پی کے ترجمان محمد خراسانی کا کہنا ہے کہ تاحال حکومت سے بات چیت کا باقاعدہ سلسلہ بھی شروع نہیں ہوا ہے۔
پاکستانی ذرائع ابلاغ میں ایسی خبریں سامنے آئی ہیں، جن میں کہا گیا ہے کہ حکومتِ پاکستان نے خیر سگالی کے جذبے کے تحت حراستی مراکز سے لگ بھگ ایک سو طالبان قیدیوں کو رہا کر دیا ہے۔
خبر میں سکیورٹی ذرائع کے حوالے سے بتایا گیا کہ رہائی کا یہ عمل طالبان کی جانب سے کسی مطالبے کے تحت نہیں کیا گیا بلکہ بات چیت کے لیے سازگار ماحول بنانے کے لیے کیا گیا ہے۔
سینیئر صحافی جمشید باغوان نے بی بی سی کو بتایا کہ اُن کی معلومات کے مطابق ان قیدیوں کو حراستی مراکز سے رہا کیا گیا ہے، جن کی باضابطہ رہائی میں چند ماہ ہی باقی تھے اور ان میں بیشتر تو اپنے گھروں کو بھی پہنچ چکے ہیں۔
اُنھوں نے دعویٰ کیا کہ اُن کے ذرائع کے مطابق قیدیوں کی یہ رہائی طالبان کے مطالبات یا ان کی شرائط کے تحت نہیں کی گئی بلکہ یہ رہائی خیر سگالی کے اقدام کے طور پر کی گئی ہے۔
دوسری جانب تحریک طالبان پاکستان کے ترجمان نے بی بی سی کو بتایا کہ ان کی تنظیم سے تعلق رکھنے والا کوئی قیدی رہا نہیں کیا گیا ہے۔
محمد خراسانی کا کہنا تھا کہ دونوں جانب سے مذاکراتی کمیٹیاں اب تک آمنے سامنے میز پر بیٹھی ہی نہیں تو پھر ایسے میں شرائط اور مطالبات کی بات قبل از وقت ہو گی۔ انھوں نے کہا ہے کہ تحریک طالبان پاکستان کی جانب سے اب تک کسی قسم کی شرائط پیش نہیں کی گئی ہیں۔
پاکستان

،تصویر کا ذریعہGETTY IMAGES
یاد رہے کہ چند روز قبل تحریک طالبان کے طاقتور کمانڈر عبدالولی مہمند عرف عمر خالد خراسانی نے بی بی سی کو بتایا تھا کہ حکومتِ پاکستان کی جانب سے تحریک طالبان پاکستان کے مطالبات ماننے کی صورت ہی میں ان مذاکرات میں پیش رفت ہو سکتی ہے، جس میں اب بھی سرفہرست مطالبہ تحریک طالبان پاکستان کے قید ساتھیوں کی رہائی ہے۔
جمشید باغوان نے بتایا کہ ان کی اطلاع بھی یہی ہے کہ اب تک باضابطہ مذاکرات شروع نہیں ہوئے اور نہ ہی اب تک طالبان کی جانب سے کسی قسم کی کوئی شرائط یا مطالبات سامنے آئے ہیں۔
وزیرستان سے تعلق رکھنے والے ایک قبائلی رہنما نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ دونوں جانب سے مذاکرات کے لیے رابطے ضرور ہوئے ہیں اور بعض رابطے براہ راست ہوئے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ان رابطوں میں کبھی کمیٹیاں شامل رہی ہیں اور کبھی انفرادی طور پر پیغامات کا سلسلہ رہا ہے۔
ان کا کہنا تھا کہ اس وقت تک رابطے اچھے ماحول میں ہو رہے ہیں اور امن معاہدے کو پایہ تکمیل تک پہنچانے کے لیے کوششیں جاری ہیں۔
طالبان

،تصویر کا ذریعہREUTERS
حکومت پاکستان اور تحریک طالبان پاکستان کے درمیان ایک ماہ کے لیے فائر بندی کا اعلان آٹھ نومبر کو ہوا تھا۔ ان مذاکرات کے لیے ثالثی کا کردار افغان حکومت کے اہم طالبان رہنما ادا کر رہے ہیں۔ ٹی ٹی پی نے اس فائر بندی سے متعلق باقاعدہ اعلامیہ جاری کیا تھا۔
یہ بھی پڑھیے
افغان طالبان کو ممکنہ مشکلات سے بچانے کے لیے مذاکرات پر آمادہ ہوئے: عمر خالد خراسانی
عمران خان: پاکستانی طالبان سے بات ہو رہی ہے، نہیں جانتے کہ نتیجہ خیز ہوگی یا نہیں
سراج الدین حقانی کی ’ثالثی‘ میں پاکستان اور ٹی ٹی پی میں مذاکرات: رپورٹ
اعلامیے میں کیا کہا گیا تھا؟
اس اعلامیے میں کہا گیا کہ ’تحریک طالبان پاکستان چونکہ پاکستانی قوم سے ہی بنی ایک اسلامی جہادی تحریک ہے، اس لیے وہ ہمیشہ دیگر اہم مسائل کے ساتھ ساتھ قومی مفاد کو بھی مدنظر رکھتی ہےـ یہ حقیقت ہے کہ مذاکرات جنگ کا حصہ ہیں اور دنیا کی کوئی طاقت اس کا انکار نہیں کر سکتی، لہٰذا تحریک طالبان پاکستان ایسے مذاکرات کے لیے تیار ہے، جس سے ملک بھر میں دیرپا امن قائم ہو سکے اور ہمارے پاکستانیوں کو ایک طرف امن کی بہاریں میسر ہوں اور دوسری طرف پاکستان کے حصول کا مقصد بھی حاصل ہو سکے۔‘
اس اعلامیے میں کہا گیا کہ فریقین نے مذاکراتی کمیٹیوں کے قیام پر اتفاق کیا ہےـ یہ کمیٹیاں آئندہ لائحہ عمل اور فریقین کے مطالبات پر مذاکراتی عمل کو آگے بڑھانے کی کوشش کریں گے۔ فریقین کی طرف سے ایک ماہ یعنی نو نومبر سے نو دسمبر تک فائر بندی ہو گی, جس میں فریقین کی رضامندی سے مزید توسیع بھی کی جائے گی۔
فریقین پر فائربندی کا لحاظ رکھنا ضروری ہے ـ امارت اسلامیہ افغانستان موجودہ مذاکراتی عمل میں تحریک طالبان پاکستان اور حکومت پاکستان کے مابین ثالث کا کردار ادا کر رہی ہے۔

Government has not deny this.
 

Big Tank

SENIOR MEMBER
Apr 30, 2013
3,011
3
5,557
Country
Pakistan
Location
Pakistan
The biggest liar in the history of Pakistan is establishment. They control politics, they control the law and they control the raw agent certification courses in Pakistan.

I can't see why the Afgan Taliban cheerleaders aren't jumping like they djd before about Taliban takeover and the upcoming annihilation of Indian Investment TTP. The same TTP is now being advocated by Afgan Taliban.
 

Areesh

BANNED
Mar 30, 2010
39,626
3
82,613
Country
Pakistan
Location
Pakistan
Ehsan ullah Ehsan was the spokesperson of TTP, NO??
He was spokesman for a breakaway faction of TTP

That is why I need that specific statement of Ehsanullah Ehsan where he accepted responsibility for APS attack

Kindly share that statement with us
The biggest liar in the history of Pakistan is establishment. They control politics, they control the law and they control the raw agent certification courses in Pakistan.

I can't see why the Afgan Taliban cheerleaders aren't jumping like they djd before about Taliban takeover and the upcoming annihilation of Indian Investment TTP. The same TTP is now being advocated by Afgan Taliban.
I think we should call back all the Pakistanis from Syria that are fighting for that mass murderer Bashar ul Assad and send them to Afghanistan to fight TTP

In this way I think we can definitely beat TTP instead of doing dialogue with them
 

Users Who Are Viewing This Thread (Total: 1, Members: 0, Guests: 1)


Top Bottom